کلمہ کی تشریح

 

نہیں رہیگی کوئی صفت باقی سواے ذات کے میرے اندر روح بنکر

اللہ کا کلام ہے

  قران کے حکم سے ) نکال پکھو دنیا و آخرت کو اپنے دلوں  سے – دنیا محبّت کا اور آخرت نیامت کا مکان ہے ان دونو سے اچھا تو میرا قلب ہے جو  معرفت کا مکان ہے

 :کلمہ مے دو حصّے ہیں

 

  الله کا تعا رف کرواتا ہے – 

            

      محمّد ﷺ کا تعا رف کرواتا ہے جو چلتا پھرتا قران ہے اب تک جو کلمہ ہم پڑھتے اے ہیں وو ” لائی لہ الا الله ” تھا جب کے قران میں خود لکھا ہے

 

سوره – محمّد پارہ – ٢٦ آیت – ١٩

 

لا – الگ لکھا ہے ، الہ – الگ لکھا ہے ، الا الله – الگ لکھا ہے

ہم سب جانے انجانے میں اتنی بڑی غلطی کر بیٹھے تھے کے جسکا اندازہ ہمیں خود نہیں تھا – پہلے تین دن صرف پہلا حصّہ کلمہ کا پڑھیں گے یعنی کی لا – الہ – الا الله کیوں ک اس میں الله کی ذات کی پہچان ہے – دوسرے حصّے یعنی محمّد رسول الله کی پہچان ہے جو کے چلتا پھرتا قران ہے – اگر آپ بغیر غسل و طہارت کے الله کے  محبوب کا نام لو گے تو تم کو گناہ ہوگا – تم لوگ محمّد ﷺ کوکیسے پہچانو گے – جب تک تم کو الله نہیں سمجھ آیا تو الله کا کلام کیسے سمجھ میں اےگا – اس لئے کلمے کو  تین حصّے میں پڑھنا چاہیے لا – الہٰ – الا الله

لا – کو الگ پڑھنا ہوگا

الہٰ – کو الگ پڑھنا ہوگا

الا الله – کو کھنچ کر پڑھنا ہوگا

لا – کے معنے ” نہیں رہیگی “

الہٰ – کے معنے “صفت”

صفت یعنی کی جنت – دوزخ – زمین – آسمان – انسان – فرشتے – جن – ماں باپ – عزیز – پڑوسی – دوست احباب حتی کے تیرا مجسسیمہ یعنی کی تیرا نفس بھی نہیں رہیگا – یہ سب صفات الله کے ہیں اور ان چیزوں میں سے کسی بھی چیز کو چا ہے سے گناہ کا فتویٰ لگ جائے گا – اسی لئے آپ کو چاہے کے الله سے ہٹ کر کوئی بھی چیز ہو اسکی نفی کرنا ہوگا اور الله کی ذات کو ہی روح ماننا ہوگا

 الا الله – کے معنے کاینات کی دھڑکن جسکو ہم روح کہتا ہیں وہی ہم سب کا رب ہے اسی لئے اپنی روح کو ہی اپنا رب مان کر اپنی نفس کی نفی کرنا چاہیے

کے تعلق سے قران میں لکھا ہوا ہے 

 

ے نبی ﷺ نکال پھینکو دنیا کی محبّت اور آخرت کی لالچ کو – دنیا محبّت کا آخرت  کا مقام ہے ، ان دونوں سے تو اچھا تو میرا قلب ہے ، جو معرفت (الله کی پہچان) کا مقام ہے  – جس میں الله کی ذات رہتی ہے – اب ان دونوں حصّوں کو پڑھنے سے تم کو الله کی ذات سمجھ میں اے گی- روح زندہ ہوگی اسکے بعد ہی تم کو الله کے نبی ﷺ اور انکی کتاب سمجھ میں اے گی تو ہی تم صحیح معنے میں اس پر عمل کر سکتے ہو ، ورنہ گمراہ ہو جاؤگے نفس کے اندھیرے میں

 

 

Translate »